Friday, 12 February 2016

جان جاتی تھی کارِ الفت میں

جان جاتی تھی کارِ الفت میں
اُس نے بوسہ دیا ہے اجرت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تُو ملا ہے نہ میرے دل کو قرار
پڑ گیا میں یہ کس مصیبت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک حقیت ہے اس فسانے میں
اک فسانہ ہے اس حقیقت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنے حصے کے سب عذاب سہے
اب ٹھکانہ ہے میرا جنت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری آنکھوں میں بھی سنور لیتی
آئینہ دے دیا مروت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ترے واسطے شہید ہوا
تُوکسی اور کی حمایت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھ پہ رویا نہ جائے بعد مرے
لکھ دیا میں نے یہ وصیت میں
۔۔۔۔۔۔۔۔
سونپ دی اپنی بادشاہی اُسے
ہم نے قیصر کسی رقابت میں


Tags: , , , , , , , , ,

0 Responses to “جان جاتی تھی کارِ الفت میں ”

Post a Comment

Subscribe

Donec sed odio dui. Duis mollis, est non commodo luctus, nisi erat porttitor ligula, eget lacinia odio. Duis mollis

© 2013 Poetry-Poems-Love Stories-Gazals. All rights reserved.
Designed by SpicyTricks